Connect with us

Subscribe

Travel

باغوں کے شہر لاہور کے سات مشہور پارکس

آج کل کی مصروف ترین طرز زندگی میں ہر انسان کو ایسی پر سکون جگہ کی تلاش ضرور ہوتی ہے ، جہاں جا کر دل و دماغ تروتازہ ہو جائیں اور اس مقصد کے لئے  قدرتی حسن سے مالامال پارکس سے بہتر مقام کوئی اور نہیں ہو سکتا ۔ “باغات کا شہر” کے نام سے مشہور شہر لاہور میں بھی جہاں ایک طرف تاریخی مقامات اور نئے دور کی بلند و بالا عمارات اپنے رنگ بکھیرتی ہیں ، وہیں سرسبزوشاداب پارک روح کو تروتازہ اور آنکھوں کو ٹھنڈک پہنچاتے نظر آتے ہیں ۔ چلیے آپ سب کی روح کو بھی تروتازہ کرنے کے لیے،  بات کرتے ہیں لاہور کے چند مشہور اور سرسبزو شاداب پارکس کے بارے میں ۔

 :شالامار باغ (شالیمار گارڈن) لاہور

لاہور کے علاقے باغبانپورہ کے قریب واقع یہ باغ، مغلیہ دور کے فن تعمیر کا عظیم شاہکار اور پاکستان کا ایک قیمتی تاریخی ورثہ ہے ۔ 1642ء میں مغل بادشاہ، شاہ جہاں کے دور میں بنایا گیا یہ پارک تین حصوں فرح بخش ، فیض بخش اور حیات بخش پر مشتمل ہے ۔ ہر حصہ ، دوسرے حصے سے 4.5 میٹر تک بلند ہے ۔ باغ کے اندر داخل ہوتے ہی ایسے محسوس ہوتا ہے جیسے آپ مغلیہ سلطنت کے زمانے میں آ گئے ہیں ، اس دور کے آثار آج بھی اپنی پوری آب و تاب کے ساتھ اس باغ میں زندہ ہیں ۔ “چارباغ ”  کے تصور پر بنایا گیا مستطیل شکل کا یہ باغ، چاروں طرف سے اینٹوں کی اونچی دیوار سے گھرا ہوا ہے ۔ چاروں طرف پھیلی ہریالی ، ان گنت فوارے اور آبشار ، باغ کی فضا کو مزید سحر انگیز بنا دیتے ہیں ۔ اس کے علاوہ اس باغ میں آپ کو کئی عمارتیں بھی نظر آئیں گی ،جن میں بیگم صاحب خوابگاہ ، حمام ، بارہ دری ، آرام گاہ ،دیون خاص و عام اور ایوان وغیرہ شامل ہیں ۔یہی وجہ ہے کہ فن تعمیر کے اس عظیم شاہکار کو 1981ء میں یونیسکو کی طرف سے عالمی ثقافتی ورثہ میں شامل کیا گیا۔

:باغ جناح 

ایک اہم تاریخی حیثیت کا حامل یہ باغ ، مال روڈ لاہور کو دلکش بنائے ہوئے ہے ۔ باغ میں داخل ہوتے ہی ہر طرف انواع و اقسام کے پودے ، درخت ،جڑی بوٹیاں ، جھاڑیاں وغیرہ نظر آئیں گی اور اس کہ وجہ یہ ہے کہ اس باغ کو “بوٹینیکل گارڈن ” کے تصور پر بنایا گیا تھا ۔ 141 ایکڑ زمین پر پھیلے اس باغ کو پہلے “لارنس باغ” کے طور پر جانا جانا جاتا تھا ،پاکستان بننے کے بعد بانی پاکستان محمد علی جناح کے نام پر اسے ” باغ جناح ” کہا جانے لگا ۔ ہر طرف بکھری اس ہریالی میں قائد اعظم لائبریری ، مسجد اور مدرسہ دارالسلام بھی موجود ہیں ،اس کے علاوہ کھیل اور دوسری تفریحی سرگرمیوں کو فروغ دینے کے لئے ٹینس کورٹ ، جم خانہ کرکٹ کلب ، اوپن ایئر تھیٹر اور ریسٹورانٹ بھی سیاحوں کو اپنی طرف متوجہ کرتے ہیں.

:گلشن اقبال پارک لاہور

شاعر مشرق ، علامہ اقبال کے نام پر رکھا گیا یہ پار ک اپنے اندر بے شمار رنگینیاں سمیٹے ہوئے سیاحوں کا منتظر رہتا ہے ۔ سرسبز پودے ، انواع و اقسام کے پھول اور نفاست سے سجائے گئے اس پارک میں، سیکیورٹی اور صفائی کا بہترین انتظام کیا گیا ہے ۔ 67 ایکڑ زمین پر پھیلے اس پارک کے ایک طرف طرح طرح کے جھولے موجود ہیں اور دوسری طرف ایک مصنوعی جھیل اور ایک مصنوعی نہر بھی بنائی گئی ہے ، جو کہ نہ صرف آنکھوں کو بھا جانے والا نظارہ پیش کرتی ہے ، بلکہ کشتی رانی کی سہولت بھی فراہم کرتی ہے ۔ چھوٹا سا چڑیا گھر بھی پارک کے اندر موجود ہے ۔پکنک منانے کا دل ہو یا بچوں کے ساتھ کھیلنے کا، یہ جگہ بہترین ہے ۔ خاص طور پر صبح اور شام کے وقت، کافی تعداد میں لوگ  یہاں صرف سیر کرنے کے لئے بھی آتے ہیں ۔ گلشن بلاک ، علامہ اقبال ٹاؤن میں واقع اس پارک میں کھانے پینے کے مختلف سٹالز اور بچوں کے لئے مختلف کھیلوں کا بھی انتظام موجود ہے۔

 :ریس کورس پارک لاہور

زندہ دلوں کے شہر لاہور کی خوبصورتی میں مزید اضافہ کرتا یہ رنگارنگ پھولوں اور پودوں سے بھرا پارک 1985ء میں گورنر غلام جیلانی خان نے بنایا اور اسی مناسبت سے اسے جیلانی پارک کا نام دیا گیا ۔ 88 ایکڑ زمین پر مشتمل اس پارک میں آئے دن چارسو خوشبوئیں بکھیرتے پھولوں کی نمائش منعقد کی جاتی ہے اور خاص طور پر بہار کے موسم میں اس پارک کی خوبصورتی دیکھنے کے لائق ہوتی ہے ۔  گھڑسواری کے شوقین افراد کے لئے پولو مقابلے بھی منعقد کئے جاتے ہیں ۔ اس پارک میں موجود مصنوعی آبشار کا نظارہ بھی اپنی مثال آپ ہے ، غرض فطرت سے محبت رکھنے والوں کے لئے یہ جگہ بہترین ہے۔ سکیٹنگ رنک ، کرکٹ گراؤنڈز اور بہت ساری دوسری کھیلوں اور نمائشوں کا بھی انعقاد ، اس پارک کو ملکی اور غیر ملکی سیاحوں کی دلچسپی کا مرکز بنائے رکھتا ہے ۔

:ماڈل ٹاؤن پارک لاہور

  گورنر پنجاب غلام جیلانی خان کی جانب سے 1990ء میں یہ پارک ، لاہور کے علاقے ماڈل ٹاؤن میں بنوایا گیا ۔ اسے ایک تفریحی مقام بھی کہا جا سکتا ہے، جہاں ہر سو بکھری ہریالی آنکھوں کو ٹھنڈک پہنچا رہی ہوتی ہے ۔ بچوں کے قسم قسم کے جھولے ، ایک خوبصورت تالاب ، فاؤنٹین , اور کیفے ٹیریا اس پارک کی رونق میں اضافہ کر رہے ہیں ۔  گولف کے شائقین کے لئے “گولف کورس” کی سہولت بھی فراہم کی گئی ہے۔ پرسکون ماحول میں کچھ وقت گزارنے کا دل چاہ رہا ہو ، پکنک منانے کا ارادہ ہو یا جوگنگ کرنی ہو ، اس پارک کا انتخاب آپ کو کبھی مایوس نہیں کرے گا ۔ خاص طور پر اس پارک کا تقریبا 2.75 کلومیٹر لمبا “جوگنگ ٹریک ” ،ایشیاء کے سب سے بڑے جوگنگ ٹریکس میں سے ایک ہے ، جو کہ خالص چکنی مٹی (کلے) سے بنایا گیا ہے ۔

:سفاری پارک

“ووڈ لینڈ وائلڈ لائف پارک” اور “لاہور زو سفاری” کے نام سے بھی جانا جانے والا یہ منفرد طرز کا پارک رائیونڈ لاہور روڈ پر واقع ہئ۔  1982ء میں تعمیر کیا گئے اس پارک میں جانور صرف پنجروں میں ہی قید نظر نہیں آتے بلکہ آپ ان کو اپنی گاڑیوں میں بیٹھے ،پنجروں سے آزاد چلتے پھرتے دیکھ سکتے ہیں ۔  242 ایکڑ پر مشتمل اس پارک میں جانوروں اور پرندوں کی مختلف اقسام کے علاوہ بوٹنگ ،فشنگ اور گھڑ سواری سے بھی محظوظ ہوا جا سکتا ہے ۔ نہر کی موجودگی اس پارک کی خوبصورتی میں مزید اضافہ کرتی ہے۔

:جلو پارک لاہور

جلو پارک، لاہور جسے “جلو وائلڈ لائف پارک ” کا نام بھی دیا جاتا ہے ، 1978ء میں ایک تفریحی اور جنگلی حیات پر مبنی پارک کے تصور پر بنایا گیا ۔ 461 ایکڑ زمین پر مشتمل یہ پارک جنگلی حیات کی افزائش نسل کے لئے خاطرخواہ اقدام کر رہا ہے اور اس مقصد کے لیے 43 ایکڑ پر مشتمل “وائلڈ لائف سنڑ” پارک کے اندر موجود ہے۔ اس کے علاوہ فاریسٹ ریسرچ سنٹر ، تھیم پارک ، ریسٹورانٹس ، کافی شاپز ، سوئمنگ پول،  بوٹنگ اور فشنگ کے لئے ایک خوبصورت جھیل  بھی بنائی گئی ہے ۔ 2008ء میں پاکستانی گورمنٹ کی طرف سے اس پارک کو مزید پرکشش بنانے کے لئے کرکٹ  اور سوکر گراؤنڈز ، لان ٹینس اور والی بال کورٹس ، بائی سائکلنگ ٹریک کی سہولیات کا بھی اضافہ کیا گیا ۔

Subscribe to Infotainment box updates

Comments
Advertisement

Advertisement
Connect
Subscribe to Infotainment box updates